آئی پی ایل کے میچ کے دوران سٹیڈیم کے اندر مظاہرہ

 

 

انڈیا کی ریاست تمل ناڈو میں جاری پانی کے شدید بحران کی وجہ سے چندم برم سٹیڈیم کے اندر اور باہر مظاہرین نے پولیس کے ساتھ ہنگامہ آرائی کرتے ہوئے پانی کے بحران کے حل تک چنئی میں آئی پی ایل کے میچ منسوخ کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔

انڈیا کی ریاست تمل ناڈو میں ان دنوں پانی کا شید بحران جاری ہے اور منگل کو چندم برم سٹیڈیم کے باہر سینکڑوں مظاہرین نے چنئی سپر کنگز اور کولکتہ نائٹ رائیڈرز کے درمیان میچ سے قبل ہنگامہ آرائی کی جس سے میچ کا انعقاد بھی خطرے میں پڑ گیا۔

خیال رہے کہ منگل کو چنئی سپر کنگز کی ٹیم دو سال کی پابندی کے بعد میچ کھیلنے اپنے ہوم گراؤنڈ پر پہنچی تو پانی کے بحران پر مشتعل مظاہرین نے پولیس کے ساتھ ہنگامی آرائی کی۔
خبر رساں ادارے اے ایف پی کے مطابق سٹیڈیم کے باہر موجود مشتعل مظاہرین نے پانی کے بحران کے حل تک چنئی میں آئی پی ایل کے میچ منسوخ کرنے کا مطالبہ کیا جس کی وجہ سے کولکتہ نائٹ رائیڈرز کی ٹیم اور میچ آفیشلز دیر سے سٹیڈیم پہنچے اور میچ 13 منٹ تاخیر سے شروع ہوا۔

یہ بھی پڑھیے

 

 

 

ایک احتجاجی نے اے ایف پی کو بتایا ’ہم چاہتے ہیں کہ ہمارے مطالبات تسلیم کیے جانے تک چنئی میں آئی پی ایل کے سات میچ منسوخ کر دیے جائیں۔ ‘
چنئی میں 10 اپریل سے 20 مئی تک آئی پی ایل کے سات میچ کھیلے جائیں گے۔
خبر رساں ادارے پی ٹی آئی کے مطابق مظاہرین نے چنئی سپر کنگز کی پیلی رنگ کی جرسی بھی جلا دی۔
پولیس کے مطابق مظاہرین نے چنئی سپر کنگز اور کولکتہ نائٹ رائیڈرز کے درمیان جاری میچ کے دوران گراؤنڈ میں جوتے بھی پھینکے۔
میچ میں پہلے بیٹنگ کرنے والی کولکتہ نائٹ رائیڈرز کی اننگز کے آٹھویں ویں اوور میں ایک تماشائی نے جوتا پھینکا جو لانگ آن باؤنڈری پر کھڑے انڈین کھلاڑی رویندرا جڈیجہ کے قریب گرا۔
سٹیڈیم میں کسی بھی قسم کے سیاسی نعروں پر مبنی پوسٹرز یا بینر لانے پابندی کے باوجود مظاہرین کا ایک گروہ اپنے مطالبات کے حامل بینرز کے ساتھ سٹیڈیم میں موجود تھا۔
مذکورہ واقعے کے بعد پولیس نے ملزم کو حراست میں لینے کے بعد سیاسی نعروں کے حامل بینرز تھامے شائقین کو بھی سٹیڈیم سے باہر نکال دیا۔
اس کے بعد پورے میچ میں کوئی ناخوشگوار واقعہ پیش نہیں آیا اور میچ بغیر کسی تعطل کے مکمل ہوا۔
چنئی سپر کنگز نے کولکتہ نائٹ رائیڈرز کے خلاف 203 رنز کا ہدف میچ کے آخری اوور کی پانچویں گیند پر پورا کر لیا۔