گپٹل کی جارحانہ اننگز،نیوزی لینڈ دوسرے ون ڈے میں بھی فاتح

نیوزی لینڈ نے پاکستان کو پانچ ایک روزہ میچوں کی سیریز کے دوسرے میچ میں آٹھ وکٹوں سے شکست دے کر سیریز میں دو صفر کی برتری حاصل کر لی ہے۔
نیلسن میں کھیلے جانے والے میچ میں پاکستان نے پہلے کھیلتے ہوئے 246 رنز بنائے تاہم بارش کی وجہ سے نیوزی لینڈ کی اننگز 25 اوورز تک محدود کر دی گئی ہے اور اسے فتح کے لیے 151 رنز کا ہدف ملا جو اس نے باآسانی دو وکٹوں کے نقصان پر 24ویں اوور میں حاصل کر لیا۔

نیوزی لینڈ کی جانب سے مارٹن گپٹل نے جارحانہ بلے بازی کا مظاہرہ کیا اور پانچ چوکوں اور پانچ چھکوں کی مدد سے 71 گیندوں پر 86 رنز کی اننگز کھیلی اور اپنی ٹیم کی فتح میں کلیدی کردار ادا کیا۔
ان کے علاوہ راس ٹیلر نے 45رنز کی اہم اننگز کھیلی۔
نیوزی لینڈ کو اپنی اننگز کے پہلے اوور میں نقصان اٹھانا پڑا جب محمد عامر کی گیند پر شاٹ کھیلنے کی کوشش میں کولن منرو صفر پر کیچ آؤٹ ہو گئے۔
نیوزی لینڈ کی دوسری وکٹ 47 رنز پر گری جب کپتان کین ولیمسن کو فہیم اشرف نے آؤٹ کیا۔ ولیمسن نے 19 رنز بنائے۔
اس کے بعد گپٹل اور ٹیلر نے 104 رنز کی شراکت قائم کی اور مزید کسی نقصان کے بغیر اپنی ٹیم کو فتح دلوا دی۔
اس سے قبل پاکستان نے پہلے بیٹنگ کرتے ہوئے نو وکٹوں کے نقصان پر246 رنز بنائے۔ پاکستانی ٹیم کو اپنی اننگز کے آغاز پر ہی مشکلات کا سامنا رہا اور اوپنرز اظہر علی اور امام الحق 14 کے مجموعی سکور پر پویلین واپس لوٹ گئے۔

تاہم مڈل آرڈر میں محمد حفیظ اور بعد میں شاداب اور حسن علی کی عمدہ بیٹنگ کی بدولت پاکستان نیوزی لینڈ کو ایک قابلِ ذکر ہدف دینے کے قابل ہوا۔
نیلسن میں کھیلے جانے والے میچ میں پاکستانی ٹیم کے کپتان سرفراز احمد نے ٹاس جیت کر پہلے بیٹنگ کا فیصلہ کیا۔
پاکستان کی جانب سے اظہر علی اور امام الحق نے اننگز کا آغاز کیا تو چوتھے اوور میں امام الحق بولٹ کی گیند پر کیچ آؤٹ ہو گئے۔
پانچ ایک روزہ میچوں کی سیریز کے بارے میں مزید پڑھیے

پہلی وکٹ گری تو مجموعی سکور پانچ رن تھا جبکہ امام الحق دو رنز ہی بنا سکے۔ اس کے بعد اوپنر اظہر علی 5ویں اوور میں ساؤدی کی گیند پر ایل بی ڈبلیو آؤٹ ہو گئے۔
ابتدائی نقصان کے بعد پاکستان کی رنز بنانے کی رفتار مزید سست پڑ گئی اور اسی دوران 39 رنز پر اسے تیسرا نقصان بابر اعطم کی صورت میں اٹھانا پڑا جنھوں نے جمے قدموں کے ساتھ شاٹ کھیلنے کی کوشش کی اور 10 کے سکور پر سلپ میں کیچ آؤٹ ہو گئے۔

اس کے بعد شعیب ملک اور حفیظ نے پاکستان کی اننگز کو مستحکم کرنے کی کوشش کی تاہم یہ 22ویں اوور میں یہ شراکت داری اس وقت ختم ہو گئی جب 84 کے مجموعی سکور پر شعیب ملک نے ایسٹل کی گیند پر چھکا لگانے کی کوشش کی اور باؤنڈی پر کیچ آؤٹ ہو گئے۔

108 رنز پر کپتان سرفراز احمد ایک غیر ذمہ دارانہ شاٹ کھیلتے ہوئے سٹمپ آؤٹ ہو گئے۔ ایک گیند پہلے ہی ان کے خلاف ایل بی ڈبلیو کی ایک زور دار اپیل ہوئی تھی جس کو ایمپائر نے مسترد کر دیا تاہم نیوزی لینڈ نے اس کے خلاف نظرثانی کا فیصلہ کیا تاہم تھرڈ ایمپائر نے ناٹ آؤٹ کے فیصلے کو برقرار رکھا۔

اس کے بعد 128 کے مجموعی سکور پر اننگز میں پراعتماد بیٹنگ کرنے والے محمد حفیظ 60 رنز بنا کر کیچ آؤٹ ہو گئے۔
141 کے سکور پر 7ویں وکٹ فہیم اشرف کی گری جو صرف سات رنز بنا کر کیچ آؤٹ ہو گئے۔
آؤٹ ہونے والے 8ویں بلے باز حسن علی تھے جنھوں نے جارحانہ اننگز کھیلتے ہوئے 31 گیندوں چار چھکوں اور چار چوکوں کی مدد سے 51 رنز بنائے اور ففٹی مکمل ہونے کے بعد ایک اور چھکا لگانے کی کوشش میں باؤنڈری پر کیچ آؤٹ ہو گئے۔

حسن علی اور شاداب کے درمیان 70 رنز کی شراکت داری ہوئی اور اس دوران حسن علی کی دھواں دار بیٹنگ نے نیوزی لینڈ کے بولرز کو پریشان کیے رکھا۔ شاداب 52 رنز بنا کر آؤٹ ہوئے۔
پاکستان نے پہلا ایک روزہ میچ کھیلنے والی ٹیم میں ایک تبدیلی کی ہے جس میں انجری کا شکار اوپنر فخر زمان کی جگہ امام الحق کو ٹیم میں شامل کیا گیا ہے۔
دوسری جانب نیوزی لینڈ نے اپنی ٹیم میں کوئی تبدیلی نہیں کی ہے۔
اس سے پہلے ویلنگٹن میں کھیلے گئے پہلے ایک روزہ میچ میں نیوزی لینڈ نے پاکستان کو ڈک ورتھ لوئس طریقے کے تحت 61 رنز سے شکست دے کر پانچ میچوں کی سیریز میں ایک صفر کی برتری حاصل کر لی تھی۔
خیال رہے کہ سری لنکا کے خلاف سیریز کے بعد پاکستانی کرکٹ ٹیم تقریباً دو ماہ کے وقفے کے بعد میدان میں اتری تھی اور مبصرین کی جانب سے اس سیریز کو ایک کڑا امتحان قرار دیا جا رہا ہے۔
پاکستان ٹیم: اظہر علی،امام الحق، بابر اعظم، شعیب ملک، محمد حفیظ، سرفراز احمد، فہیم اشرف، شاداب خان، محمد عامر، حسن علی اور رومان رئیس۔
نیوزی لینڈ ٹیم: مارٹن گپٹل، کولن منرو، کین ولیمسن، روس ٹیلر، ٹام لیتھم، ہینری نکولس، ٹوڈ ایسٹل، مچل سینٹنر، ٹیم ساؤدی، لوکی فرگوسن اور ٹرنٹ بولٹ۔